جنگل کی آگ

احمد ندیم قاسمی

جنگل کی آگ

احمد ندیم قاسمی

MORE BYاحمد ندیم قاسمی

    آگ جنگل میں لگی تھی لیکن

    بستیوں میں بھی دھواں جا پہنچا

    ایک اڑتی ہوئی چنگاری کا

    سایہ پھیلا تو کہاں جا پہنچا

    تنگ گلیوں میں امڈتے ہوئے لوگ

    گو بچا لائے ہیں جانیں اپنی

    اپنے سر پر ہیں جنازے اپنے

    اپنے ہاتھوں میں زبانیں اپنی

    آگ جب تک نہ بجھے جنگل کی

    بستیوں تک کوئی جاتا ہی نہیں

    حسن اشجار کے متوالوں کو

    حسن انساں نظر آتا ہی نہیں

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    جنگل کی آگ نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY