جنت کشمیر یہی ہے

عرش ملسیانی

جنت کشمیر یہی ہے

عرش ملسیانی

MORE BYعرش ملسیانی

    جس خاک کی ہے اوج پہ تقدیر یہی ہے

    جو رد‌ غلامی کی ہے اکسیر یہی ہے

    بیداری جمہور کی تصویر یہی ہے

    آزادئ افراد کی تعمیر یہی ہے

    اے عرشؔ ترے خواب کی تعبیر یہی ہے

    فردوس زمیں جنت کشمیر یہی ہے

    اس سے نہیں اچھا کوئی گلزار اسے دیکھ

    اس سے نہیں بڑھ کر کوئی شہکار اسے دیکھ

    اس سے نہیں اونچا کوئی دربار اسے دیکھ

    اس سے نہیں بہتر کوئی دیدار اسے دیکھ

    فطرت نے جو کھینچی ہے وہ تصویر یہی ہے

    فردوس زمیں جنت کشمیر یہی ہے

    شروانیٔ معصوم کی جاگیر نہ ڈھونڈو

    شروانیٔ مظلوم کی جاگیر نہ ڈھونڈو

    شروانیٔ مخدوم کی جاگیر نہ ڈھونڈو

    شروانیٔ مرحوم کی جاگیر نہ ڈھونڈو

    شروانیٔ مرحوم کی جاگیر یہی ہے

    فردوس زمیں جنت کشمیر یہی ہے

    گل پوش مکاں اور گل اندام مکیں بھی

    کم یاب نہیں حسن زمانے میں کہیں بھی

    دنیا میں بہت نقش ہیں دل کش بھی حسیں بھی

    جو خامۂ قدرت کی ہے تحریر یہی ہے

    فردوس زمیں جنت کشمیر یہی ہے

    جس حسن کا عشاق سناتے ہیں فسانہ

    جس حسن کے ہر ناز پہ مٹتا ہے زمانہ

    جس حسن کا ہے لب پہ مغنی کے ترانا

    جس حسن کے جلووں کی نہ حد ہے نہ ٹھکانا

    اس حسن جہاں تاب کی تنویر یہی ہے

    فردوس‌ زمیں جنت کشمیر یہی ہے

    سرمایہ و محنت کا ہے جو مسئلۂ خاص

    افلاس و امارت کا ہے جو مسئلۂ‌ خاص

    دہقان کی عظمت کا ہے جو مسئلۂ خاص

    مزدور کی شوکت کا ہے جو مسئلۂ خاص

    اس مسئلۂ خاص کی تفسیر یہی ہے

    فردوس زمیں جنت کشمیر یہی ہے

    الفت کے پیمبر ہیں پرستار اسی کے

    اخلاص کی مے پیتے ہیں مے خوار اسی کے

    مردان مجاہد ہیں طلب گار اسی کے

    ہندو ہوں کہ مسلم ہیں گرفتار اسی کے

    وابستہ ہیں سب جس سے وہ زنجیر یہی ہے

    فردوس زمیں جنت کشمیر یہی ہے

    سرمائے کے بیٹوں کی ہوئی خوب دکاں بند

    جاگیر پرستوں پہ ہوئی راہ اماں بند

    محکومئ‌‌ مجبور کی کب سے تھی زباں بند

    صدیوں کی غلامی کے ہیں کس درجہ گراں بند

    کاٹے گی جو یہ بند وہ شمشیر یہی ہے

    فردوس زمیں جنت کشمیر یہی ہے

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY