جشن عید

شکیب جلالی

جشن عید

شکیب جلالی

MORE BYشکیب جلالی

    سبھی نے عید منائی مرے گلستاں میں

    کسی نے پھول پروئے کسی نے خار چنے

    بنام اذن تکلم بنام جبر سکوت

    کسی نے ہونٹ چبائے کسی نے گیت بنے

    بڑے غضب کا گلستاں میں جشن عید ہوا

    کہیں تو بجلیاں کوندیں کہیں چنار جلے

    کہیں کہیں کوئی فانوس بھی نظر آیا

    بطور خاص مگر قلب داغ دار جلے

    عجب تھی عید خمستاں عجب تھا رنگ نشاط

    کسی نے بادہ و ساغر کسی نے اشک پئے

    کسی نے اطلس و کمخواب کی قبا پہنی

    کسی نے چاک گریباں کسی نے زخم سیے

    ہمارے ذوق نظارہ کو عید دن بھی

    کہیں پہ سایۂ ظلمت کہیں پہ نور ملا

    کسی نے دیدہ و دل کے کنول کھلے پائے

    کسی کو ساغر احساس چکنا چور ملا

    بہ فیض عید بھی پیدا ہوئی نہ یک رنگی

    کوئی ملول کوئی غم سے بے نیاز رہا

    بڑا غضب ہے خدا وند کوثر و تسنیم

    کہ روز عید بھی طبقوں کا امتیاز رہا

    مآخذ:

    • کتاب : Kulliyat-e-Shakiib Jalali (Pg. 462)
    • Author : Mohd Nasir Khan
    • مطبع : Farid Book Depot Pvt. Ltd (2007)
    • اشاعت : 2007

    Tagged Under

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY