کھلونے

وحید احمد

کھلونے

وحید احمد

MORE BYوحید احمد

    (تیسری دنیا کے تمام لوگوں کے نام)

    عجب حادثہ ہے

    کہ بچپن میں ہم جن کھلونوں سے کھیلے تھے

    اب وہ کھلونے

    ہمارے ہی حالات سے کھیلتے ہیں

    وہ نازک مجسمے

    وہ رنگین گڑیائیں

    طیارے پستول

    فوجی، سپاہی

    کبھی جو ہمارے اشاروں کے محتاج تھے

    آفریں تجھ پہ معیار گردش!

    کہ اب وہ کھلونے

    ہمیں چابیاں بھر رہے ہیں

    ہمارے مویشی ہمارے ہی باغات کو چر رہے ہیں

    کھلونوں کے اس کھیل میں

    ہم تو یوں کھو گئے ہیں

    کہ ہر کام کی ہم سے امید رکھ لو

    اگر کوئی تقوے کی چابی گھما دے

    تو داڑھی بڑھا لیں

    اگر کوئی تھوڑی سی قیمت لگا کر

    کسی شخص کا گھر بتا دے

    تو اگلے ہی پل میں اس کی گردن اڑا دیں

    ہمارا ہے کیا

    ہم تو اندھے مؤذن ہیں

    بازو پکڑ کے جو گرجے میں لے جاؤگے

    تو بھی مریم کی تصویر کے سامنے

    انگلیاں کان میں ٹھونس لیں گے

    ہمارا ہے کیا

    ہم تو پتھر کی وہ مورتی ہیں

    جسے چاہے سجدہ کرو

    یا طمانچہ لگا دو

    مگر وہ تو ہاتھوں سے چھاتی چھپائے

    سدا مسکراتی رہے گی

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    کھلونے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY