خزاں موسم نہیں ہے

پیرزادہ قاسم

خزاں موسم نہیں ہے

پیرزادہ قاسم

MORE BYپیرزادہ قاسم

    خزاں موسم نہیں ہے

    ایک لمحہ ہے کہ جس کی آرزو میں

    سبز پتے

    ہوا کی آہٹوں پر کان دھرتے ہیں

    گزرتے وقت میں ساعت بہ ساعت

    نئے پیراہنوں میں

    گلابی اور گہرے سرخ عنابی

    دہکتے خوش نما رنگوں سے لے کر زرد ہونے تک

    کبھی دھیمے کبھی اونچے سروں میں بات کرتی

    خوشبوؤں میں بس بسا کر

    ہوا کے ساتھ محو رقص ہونا چاہتے ہیں

    زمیں کا رزق بن جانے سے پہلے

    وہی اک اجنبی وارفتگی اور رقص کا لمحہ

    کہیں پر دور آئندہ کے موسم کی سماعت میں

    کسی سوئے ہوئے اک بیج میں

    خواہش نمو کی سر اٹھاتی ہے

    بہت ہی پیار سے ہر شاخ کے پتے سے کہتی ہے

    کہ اب رزق زمیں بن کر

    کسی اک نرم کونپل کی نمو کا آسرا بن جا

    خزاں موسم نہیں ہے

    اک مسرت خیز تخلیق‌‌ عمل کا آسرا ہے

    مأخذ :
    • کتاب : Muntakhab Shahkar Nazmon Ka Album) (Pg. 433)
    • Author : Munavvar Jameel
    • مطبع : Haji Haneef Printer Lahore (2000)
    • اشاعت : 2000

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY