خدا کے قاتل

نامعلوم

خدا کے قاتل

نامعلوم

MORE BYنامعلوم

    وفا کے پیمان سب بھلا کر

    جفائیں کرتے وفا کے قاتل

    رسول حق کے جو امتی ہیں

    وہی ہیں آل عبا کے قاتل

    یہ اس کی اپنی ہی مصلحت ہے

    وہ جسم رکھتا نہیں ہے ورنہ

    یہ منصبوں کے غصب کے عادی

    ضرور ہوتے خدا کے قاتل

    نہ ہی امانت نہ ہی دیانت

    نہ ہی صداقت نہ ہی شرافت

    نبی کے منبر پر آ گئے ہیں

    نبی کی ہر اک ادا کے قاتل

    امام جن کا یزید ہوگا

    وہ کیسے جانیں حسین کیا ہے

    بنے بھی ہیں قاری لا الہ کے

    یہ لا الہ کی بقا کے قاتل

    یہ منصبوں کے غصب کے عادی

    ضرور ہوتے خدا کے قاتل

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY