خدا زمین پر کب آئے گا

سدریٰ افضل

خدا زمین پر کب آئے گا

سدریٰ افضل

MORE BYسدریٰ افضل

    کائنات جس کی باگیں

    کسی حادثے کے ہاتھ میں دے کر

    خدا وند کریم عبادتیں بٹور رہا ہے

    کیا اسے صرف یہی غرض ہے

    کہ وہ پہچانا جائے یا

    اس کے ہونے کی

    کچھ اور بھی حقیقت ہے

    اس ملک میں جہاں بظاہر آزادی ہے

    غلامی کے طوق پہنے ہوئے ایڑیاں رگڑتی دل مسوستی جاں بہ لب زندگی

    عمر کا طویل سفر طے کرنے کہاں جائے گی

    کیا کوئی اور زندگی بخش سیارہ دریافت ہو چکا ہے

    کیا کوئی اور زمین ڈھونڈ لی گئی ہے

    اتنی بڑی دنیا میں کیا چھوٹے پن کو دفن کرنے کی کوئی جگہ باقی نہیں

    کیا سمندروں نے اقرار کر لیا ہے کہ وہ مردار نگلیں گے

    اور کشتیوں کو بندرگاہوں کے کناروں پر پہنچا کر قزاقوں کے حوالے کر دیں گے

    آنکھ جب پتھر برسانے لگے گی تو آنسو بھر خجالت

    ماتھے سے نمودار ہو کر اپنے ہونے کا احساس دلائیں گے

    اس آزاد ملک میں جہاں غلامی کے طوق پہنے

    ایڑیاں رگڑتی دل مسوستی جاں بہ لب زندگی انتظار میں ہے

    کہ عبادتیں بٹورتا خدا کائنات کی سیڑھیوں تک تو آئے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY