Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

کرائے کا مکان

قاضی غلام محمد

کرائے کا مکان

قاضی غلام محمد

MORE BYقاضی غلام محمد

    دلچسپ معلومات

    (نوٹ: کسی کرائے کے مکان کا ذکر چوہوں کے ذر خیر کے بغیر نامکمل ہوگا سقراط)

    عجب شے ہے کرائے کا مکاں بھی

    مکاں بھی ہے یہ ظالم لا مکاں بھی

    بڑی عجلت میں بنوایا گیا ہے

    لئی سے چھت کو چپکایا گیا ہے

    ہے واقع ایک نالی کے کنارے

    میسر ہیں مجھے کیا کیا نظارے

    نظیر ان کی جہان خواب میں ہے

    بہاراں کی شب مہتاب میں ہے

    نہ کیوں ہو جسم میرا رنج سے چور

    فقط دو میل ہے یہ شہر سے دور

    یہاں آب و ہوا کا مسخ چہرہ

    ملا ہرگز نہ موقع دیکھنے کا

    ہم آپس میں بہت گھل مل گئے ہیں

    مجھے جیبوں میں چمگادڑ ملے ہیں

    ہیں بام و در پہ یہ غارت گر ہوش

    بہار بستر و نو روز آغوش

    ہماری اب یہ حالت ہو گئی ہے

    اندھیروں سے محبت ہو گئی ہے

    یہاں دن کو بھی الو بولتے ہیں

    مرے کانوں میں امرس گھولتے ہیں

    جو دنیا میں ہیں یہ کیڑے مکوڑے

    یہیں پل کر جواں ہوتے ہیں سارے

    غبار آلود یوں میری جبیں ہے

    کہیں سیڑھی کہیں کچھ بھی نہیں ہے

    اسی سیڑھی کا ہے وہ واقعہ بھی

    لڑھک کر مر گئی جو ساس میری

    یہاں چوہوں کے بل اتنے بڑے ہیں

    کئی ثابت قدم ان میں گرے ہیں

    مجھے بھی دور کی اک روز سوجھی

    کسی بل کو میں کھودوں جی میں آئی

    جو کھودا چشم حیراں نے یہ دیکھا

    کہ اک لیڈر نما موٹا سا چوہا

    دبائے منہ میں اک خاصہ بتاشا

    مرے موزے پہن کر جا رہا تھا

    وہیں اک چوہیا آ نکلی کہیں سے

    ٹپکتا ناز تھا اس کی جبیں سے

    بسا تھا عطر میں ہر ریشہ اس کا

    پرے تھا عرش سے اندیشہ اس کا

    بہت بن ٹھن کے نکلی تھی بچاری

    میاں چوہے نے فوراً آنکھ ماری

    نگاہ غیر سے شرما گئی وہ

    میاں چوہے سے پھر ٹکرا گئی وہ

    ملے یوں طالب و مطلوب باہم

    مجازی عشق کا لہرایا پرچم

    غرض چوہے قیامت ڈھا رہے ہیں

    در و دیوار پر منڈلا رہے ہیں

    میں لایا تھا کہیں سے ایک بلی

    پکڑ کر لے گئے چوہے اسے بھی

    مأخذ :
    ગુજરાતી ભાષા-સાહિત્યનો મંચ : રેખ્તા ગુજરાતી

    ગુજરાતી ભાષા-સાહિત્યનો મંચ : રેખ્તા ગુજરાતી

    મધ્યકાલથી લઈ સાંપ્રત સમય સુધીની ચૂંટેલી કવિતાનો ખજાનો હવે છે માત્ર એક ક્લિક પર. સાથે સાથે સાહિત્યિક વીડિયો અને શબ્દકોશની સગવડ પણ છે. સંતસાહિત્ય, ડાયસ્પોરા સાહિત્ય, પ્રતિબદ્ધ સાહિત્ય અને ગુજરાતના અનેક ઐતિહાસિક પુસ્તકાલયોના દુર્લભ પુસ્તકો પણ તમે રેખ્તા ગુજરાતી પર વાંચી શકશો

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے