لال بہادر شاستری

عرش ملسیانی

لال بہادر شاستری

عرش ملسیانی

MORE BYعرش ملسیانی

    شہید قوم ہے کوئی کوئی شہید وطن

    بجا ہے تجھ کو کہوں میں اگر شہید وطن

    تلاش امن میں دلی سے تاشقند گیا

    کسے خبر تھی کہ باندھے ہوا تھا سر سے کفن

    پیام امن دیا جارحان عالم کو

    گیا سنوار کے دنیا کی زندگی کا چلن

    کسے مجال تری بات کوئی کاٹ سکے

    دلیل تیری مؤثر تو پر اثر ہے سخن

    مٹھاس بات میں ایسی کہ رام اہل جہاں

    تری زبان تھی قند و نبات کا مخزن

    تھی استوار محبت تیری دوستی کی اساس

    فضائے دہر میں کوئی نہ تھا ترا دشمن

    تو ایک بندۂ درویش تھا فقیر منش

    چلا گیا جو زمانے سے جھاڑ کر دامن

    ترے خلوص کا قائل ہے صدر پاکستاں

    کہاں سے سیکھا تھا تو نے یہ گفتگو کا فن

    زمانے بھر میں ہوا ہر طرف ترا ماتم

    محیط سارے جہاں کو ہوئے ہیں رنج و محن

    قبول ہم کو کیے تو نے جس قدر پیماں

    ہے تیری روح ہمارے دلوں پہ سایہ فگن

    ہے شرق و غرب میں قائل ہر ایک شخص ترا

    وظیفہ خواں و ثناگر ترے شمال و دکن

    مأخذ :
    • کتاب : Kulliyat-e-Arsh (Pg. 380)
    • Author : Arsh Malsiyani
    • مطبع : Ali Imran Chaudhary

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY