لرزتے سائے

احمد ندیم قاسمی

لرزتے سائے

احمد ندیم قاسمی

MORE BYاحمد ندیم قاسمی

    وہ فسانہ جسے تاریکی نے دہرایا ہے

    میری آنکھوں نے سنا

    میری آنکھوں میں لرزتا ہوا قطرہ جاگا

    میری آنکھوں میں لرزتے ہوئے قطرے نے کسی جھیل کی صورت لے لی

    جس کے خاموش کنارے پہ کھڑا کوئی جواں

    دور جاتی ہوئی دوشیزہ کو

    حسرت و یاس کی تصویر بنے تکتا ہے

    حسرت و یاس کی تصویر چھناکا سا ہوا

    اور پھر حال کے پھیلے ہوئے پردے کے ہر اک سلوٹ پر

    یک بیک دامن ماضی کے لرزتے ہوئے سائے ناچے

    ماضی و حال کے ناطے جاگے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    لرزتے سائے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY