لذت عرفاں

ز خ ش

لذت عرفاں

ز خ ش

MORE BYز خ ش

    رنگ فطرت ہے وجہ حیرانی

    عقل ہے اور حیائے نادانی

    رازداں مدعا کو کہتے ہیں

    حسن الفت کا داغ پیشانی

    حسن باقی نے دل کو کھینچ لیا

    رخصت اے حسن ہستئ فانی

    دل ہے وقف رجائے رحم و کرم

    جاں ہے نذر رضائے ربانی

    اب میں سمجھی کہ ہے فنائے خودی

    انبساط بہشت لافانی

    غم نہ کر ہے نقیب ابر بہار

    خشکیٔ موسم زمستانی

    دل صد پارہ کے الم گن لوں

    دیکھی جائے گی سبحہ گردانی

    کر سکے طے نہ ملک عرفاں کو

    رومی و مغربی و کرمانی

    دورئ بزم دوست کے غم میں

    محو افغاں ہے اک افغانی

    عرش کے کنگرے پہ طائر قدس

    رات کرتا تھا یوں خوش الحانی

    کہ ہے انساں طلسم شان خدا

    قدر اپنی نہ اس نے پہچانی

    بند کیں اس نے جب ذرا آنکھیں

    کھل گیا راز بزم امکانی

    چارۂ روح فلسفی ہے نہ شیخ

    ایک وہمی ہے ایک خفقانی

    کثرت این و آں میں وحدت دوست

    کنج نایاب کی فراوانی

    شیخ رنج بیاں کا ڈر نہ کرے

    لا بیاں ہے یہ کیف وجدانی

    متشکک ہے اور شکایت ہجر

    نزہت اور شکر لطف پنہانی

    RECITATIONS

    عذرا نقوی

    عذرا نقوی

    عذرا نقوی

    لذت عرفاں عذرا نقوی

    مأخذ :
    • کتاب : Jadeed Shora-e-Urdu (Pg. 936)
    • Author : Dr. Abdul Wahid
    • مطبع : Feroz sons Printers Publishers and Stationers

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY