میں ساز ڈھونڈتی رہی

ادا جعفری

میں ساز ڈھونڈتی رہی

ادا جعفری

MORE BYادا جعفری

    احساس اولیں

    ایک موہوم اضطراب سا ہے

    اک تلاطم سا پیچ و تاب سا ہے

    امڈے آتے ہیں خودبخود آنسو

    دل پہ قابو نہ آنکھ پر قابو

    دل میں اک درد میٹھا میٹھا سا

    رنگ چہرے کا پھیکا پھیکا سا

    زلف بکھری ہوئی پریشاں حال

    آپ ہی آپ جی ہوا ہے نڈھال

    سینے میں اک چبھن سی ہوتی ہے

    آنکھوں میں کیوں جلن سی ہوتی ہے

    سر میں پنہاں تصور موہوم

    ہاے یہ آرزوے نامعلوم

    ایک نالہ سا ہے بغیر آواز

    ایک ہلچل سی ہے نہ سوز نہ ساز

    کیوں یہ حالت ہے بے قراری کی

    سانس بھی کھل کے آ نہیں سکتی

    روح میں انتشار سا کیا ہے

    دل کو یہ انتظار سا کیا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY