مجبوریاں

اسرار الحق مجاز

مجبوریاں

اسرار الحق مجاز

MORE BYاسرار الحق مجاز

    میں آہیں بھر نہیں سکتا کہ نغمے گا نہیں سکتا

    سکوں لیکن مرے دل کو میسر آ نہیں سکتا

    کوئی نغمے تو کیا اب مجھ سے میرا ساز بھی لے لے

    جو گانا چاہتا ہوں آہ وہ میں گا نہیں سکتا

    متاع سوز و ساز زندگی پیمانہ و بربط

    میں خود کو ان کھلونوں سے بھی اب بہلا نہیں سکتا

    وہ بادل سر پہ چھائے ہیں کہ سر سے ہٹ نہیں سکتے

    ملا ہے درد وہ دل کو کہ دل سے جا نہیں سکتا

    ہوس کاری ہے جرم خودکشی میری شریعت میں

    یہ حد آخری ہے میں یہاں تک جا نہیں سکتا

    نہ طوفاں روک سکتے ہیں نہ آندھی روک سکتی ہے

    مگر پھر بھی میں اس قصر حسیں تک جا نہیں سکتا

    وہ مجھ کو چاہتی ہے اور مجھ تک آ نہیں سکتی

    میں اس کو پوجتا ہوں اور اس کو پا نہیں سکتا

    یہ مجبوری سی مجبوری یہ لاچاری سی لاچاری

    کہ اس کے گیت بھی دل کھول کر میں گا نہیں سکتا

    زباں پر بے خودی میں نام اس کا آ ہی جاتا ہے

    اگر پوچھے کوئی یہ کون ہے بتلا نہیں سکتا

    کہاں تک قصۂ آلام فرقت مختصر یہ ہے

    یہاں وہ آ نہیں سکتی وہاں میں جا نہیں سکتا

    حدیں وہ کھینچ رکھی ہیں حرم کے پاسبانوں نے

    کہ بن مجرم بنے پیغام بھی پہنچا نہیں سکتا

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    مہندر کپور

    مہندر کپور

    مآخذ :
    • کتاب : Kulliyaat-e-Majaz (Pg. 85)

    موضوعات :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY