مزدور بے چارا

ہندی گورکھپوری

مزدور بے چارا

ہندی گورکھپوری

MORE BYہندی گورکھپوری

    ہوتا نہیں دم بھر بھی سکوں اس کو گوارا

    جس خاطر بیتاب کی فطرت ہی ہے پارا

    مظلوم کی فریاد سے جل جائے گا عالم

    صد شعلہ بہ داماں ہے ان آہوں کا شرارا

    غم‌ دیدوں کو دے عیش و طرب اور عطا کر

    تاج سر سلطانیٔ تیمور گدا را

    گرما دے رگیں اس کی امارت کے لہو سے

    جس ہستیٔ بے مایہ کا غربت ہے سہارا

    تخریب کے بندوں کو بس اب ہو نہیں سکتی

    انسان کی انسان سے تفریق گوارا

    پابند سہی دہر میں آئین جہاں کے

    پیران کلیسا کا ہے کیا اس میں اجارا

    تہذیب و تمدن ہیں امارت کے سہارے

    مزدور کی غربت کا نہیں کوئی سہارا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY