Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

مرزا غالبؔ

محمد صادق ضیا

مرزا غالبؔ

محمد صادق ضیا

MORE BYمحمد صادق ضیا

    راز دان زندگی اے ترجمان زندگی

    ہے ترا ہر لفظ زندہ داستان زندگی

    ہر تبسم سے ترے پیدا فغان زندگی

    ہر فغاں تیری نشید گلستان زندگی

    گلشن حسن و وفا کی آبیاری تجھ سے ہے

    خاک کے ذروں کو فخر تاجداری تجھ سے ہے

    دور مستقبل پہ دنیا کے نگاہیں تھیں تری

    رہبر راہ عمل دل دوز آہیں تھیں تری

    سینۂ علم حقیقت میں پناہیں تھیں تری

    عرش سے بھی اور آگے جلوہ گاہیں تھیں تری

    کام تھا تجھ کو نہ مطلق ہستئ ناکام سے

    تھی نوا وابستہ تیری پردۂ الہام سے

    فلسفے کی خوب صورت ترجمانی تو نے کی

    دشت ہو میں آنسوؤں سے باغبانی تو نے کی

    اپنی آنکھوں سے مسلسل خوں فشانی تو نے کی

    مدتوں ملک سخن پر حکمرانی تو نے کی

    روح مطلق جذب تھی گویا ترے احساس میں

    قدس کے نغمے نہاں تھے پردۂ انفاس میں

    نطق کو تو نے دیا پیرایۂ سوز و گداز

    خون سے کر کے وضو تو نے پڑھی اکثر نماز

    گونج اٹھا تیرے نغموں سے حریم حسن و ناز

    آج تک محفوظ ہے ہر دل میں تیرا سوز و ساز

    عالم بالا سے اک پیغام نو لاتا تھا تو

    روح کی گہرائیوں تک اس کو پہنچاتا تھا تو

    مے کدہ تھا تیرا یکسر سوز مطلق ساز بھی

    تھی مے ہندی بھی ساغر میں مے شیراز بھی

    تو حقیقت فہم بھی تھا آشنائے راز بھی

    روح کی آواز تھی گویا تری آواز بھی

    نقش فریادی ہے تیری شوخیٔ تحریر کا

    کاغذی ہے پیرہن ہر پیکر تصویر کا

    آہ خاک ہند میں تو دیر سے خوابیدہ ہے

    زینت ہر بزم تیرا جلوۂ نادیدہ ہے

    تیرے غم میں آج بھی جان سخن کاہیدہ ہے

    ہے تصرف تیرا پیدا اور تو پوشیدہ ہے

    سوز تیرا آگ بن کر بزم پر چھا جائے گا

    ساز ہستی حشر تک تیرے ہی نغمے گائے گا

    مأخذ :
    ગુજરાતી ભાષા-સાહિત્યનો મંચ : રેખ્તા ગુજરાતી

    ગુજરાતી ભાષા-સાહિત્યનો મંચ : રેખ્તા ગુજરાતી

    મધ્યકાલથી લઈ સાંપ્રત સમય સુધીની ચૂંટેલી કવિતાનો ખજાનો હવે છે માત્ર એક ક્લિક પર. સાથે સાથે સાહિત્યિક વીડિયો અને શબ્દકોશની સગવડ પણ છે. સંતસાહિત્ય, ડાયસ્પોરા સાહિત્ય, પ્રતિબદ્ધ સાહિત્ય અને ગુજરાતના અનેક ઐતિહાસિક પુસ્તકાલયોના દુર્લભ પુસ્તકો પણ તમે રેખ્તા ગુજરાતી પર વાંચી શકશો

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے