محبت

MORE BYعبید اللہ علیم

    میں جسم و جاں کے تمام رشتوں سے چاہتا ہوں

    نہیں سمجھتا کہ ایسا کیوں ہے

    نہ خال و خد کا جمال اس میں نہ زندگی کا کمال کوئی

    جو کوئی اس میں ہنر بھی ہوگا

    تو مجھ کو اس کی خبر نہیں ہے

    نہ جانے پھر کیوں!

    میں وقت کے دائروں سے باہر کسی تصور میں اڑ رہا ہوں

    خیال میں خواب و خلوت ذات و جلوت بزم میں شب و روز

    مرا لہو اپنی گردشوں میں اسی کی تسبیح پڑھ رہا ہے

    جو میری چاہت سے بے خبر ہے

    کبھی کبھی وہ نظر چرا کر قریب سے میرے یوں بھی گزرا

    کہ جیسے وہ با خبر ہے

    میری محبتوں سے

    دل و نظر کی حکایتیں سن رکھی ہیں اس نے

    مری ہی صورت

    وہ وقت کے دائروں سے باہر کسی تصور میں اڑ رہا ہے

    خیال میں خواب و خلوت ذات و جلوت بزم میں شب و روز

    وہ جسم و جاں کے تمام رشتوں سے چاہتا ہے

    مگر نہیں جانتا یہ وہ بھی

    کہ ایسا کیوں ہے

    میں سوچتا ہوں وہ سوچتا ہے

    کبھی ملے ہم تو آئینوں کے تمام باطن عیاں کریں گے

    حقیقتوں کا سفر کریں گے

    RECITATIONS

    عبید اللہ علیم

    عبید اللہ علیم,

    عبید اللہ علیم

    محبت عبید اللہ علیم

    مأخذ :
    • کتاب : Chand Chehra Sitara Aankhen (Pg. 23)
    • Author : Obaidullah Aleem
    • مطبع : Al-Ibas Printers (2012)
    • اشاعت : 2012

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے