مجھے تلاش کرو

احمد ندیم قاسمی

مجھے تلاش کرو

احمد ندیم قاسمی

MORE BYاحمد ندیم قاسمی

    INTERESTING FACT

    (فنون، لاہور، دسمبر 1973ء)

    شجر سے ٹوٹ کے جب میں گرا کہاں پہ گرا

    مجھے تلاش کرو

    جن آندھیوں نے مری سر زمیں ادھیڑی تھی

    وہ آج مولد عیسیٰ میں گرد اڑاتی ہیں

    جو ہو سکے تو انہی سے مرا پتہ پوچھو

    مجھے تلاش کرو

    چلی جو مشرق و مغرب سے تند و تیز ہوا

    مرے شجر نے مجھے پیار سے سمیٹ لیا

    مجھے لپیٹ لیا اپنی کتنی باہوں میں

    یہ بے لحاظ عناصر مگر بضد ہی رہے

    میں برگ سبز گرا برگ زرد کی مانند

    اسی سلگتی ہوئی راکھ سی پتاور میں

    جو بچھ رہی ہے افق سے افق کے پار تلک

    مجھے تلاش کرو

    شجر سے کٹ کے زباں کٹ گئی نہ ہو میری

    میں چیختا ہوں مگر حرف ناشنیدہ ہوں

    حیات تازہ ہے میری شجر سے میرا ملاپ

    کہ بس وہی مری بالیدگی کا منبع ہے

    جو ریگزار میں چھتنار دیکھنے ہیں تمہیں

    مجھے تلاش کرو

    فلک کے راز تو کھلتے رہیں گے ہم نفسو

    مرے وجود کا بھی اب تو راز فاش کرو

    مجھے تلاش کرو

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY