مسافر شب

رابعہ پنہاں

مسافر شب

رابعہ پنہاں

MORE BYرابعہ پنہاں

    سکوت شب کی ہے جلوہ فروشی

    ہے موجودات پر چھائی خموشی

    فضائے شام کو نیند آ رہی ہے

    مناظر پر سیاہی چھا رہی ہے

    ہے بدلا رنگ دن کے شور و شر کا

    ہوا تاریکیوں کا دور دورا

    رکا ہنگامہ ہائے دن کا محشر

    بڑھا شب کا سکوں بر دوش منظر

    ہے آخر روز روشن کی کہانی

    ہوئی تاریک برد آسمانی

    گیا راحت کدے میں مہر تاباں

    ہوئے انوار آتش بار پنہاں

    ہے تاریکی پیام خواب نوشیں

    خموشی ہے نوید رنگ تسکیں

    فضائے غرب ہے پیغام راحت

    افق کی خامشی الہام راحت

    ہے رنگینی فضا کی کیف عشرت

    شفق کی سرخیاں سامان فرحت

    ہواؤں میں بھرے ہیں نغمۂ شب

    ہے راحت زا رباب زخمۂ شب

    ہوا روشن نگار شب کا جلوہ

    ہیں تنویریں فلک پر کار فرما

    ستاروں کی تبسم باریوں میں

    کواکب کی منور دھاریوں میں

    سطور کہکشاں کی لغزشوں میں

    ثریا کی مجلا تابشوں میں

    فضائے سیم آرائے فلک میں

    افق کی روشن و زریں جھلک میں

    ضیا افروز ہے ماہ درخشاں

    لبوں کی تابشیں ہیں خندہ افشاں

    فضائے آسمانی رہگزر ہے

    مسافر رات کا گرم سفر ہے

    سیاہی شب کی ہے ہم راز و ہم دم

    سکوت شام ہے دم ساز و محرم

    ہے تنہائی سے رسم آشنائی

    خیال ماسوا سے بے نیازی

    سفر کی کیفیت مد نظر ہے

    کہ تخئیل سفر لطف سفر ہے

    خبر ہی کچھ نہیں حد سفر کی

    نہ کچھ پرواہ طول رہگزر کی

    خموش و مطمئن ہے جادہ پیما

    جبیں پر استقامت جلوہ فرما

    سکوت شب میں جو یوں سرگراں ہے

    مہ کامل تری منزل کہاں ہے

    تری رہبر افق کی خامشی ہے

    انیس و ہم سفر اک چاندنی ہے

    کمال زیست تیری جستجو ہے

    یہ طرز سعی حد آبرو ہے

    سبق آموز تیری داستاں ہے

    تجھے حاصل کمال کامراں ہے

    تری سعی عمل لا انتہا ہے

    ابد تک اس سفر کا سلسلہ ہے

    مأخذ :
    • کتاب : meri behtareen nazam (Pg. 58)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے