نوحہ

محمود ایاز

نوحہ

محمود ایاز

MORE BY محمود ایاز

    سیہ رات میں ٹمٹماتے ستاروں کے نیچے

    خروشاں سمندر کی موجیں تجھے ڈھونڈھتی ہیں

    خروشاں ہوا کی صداؤں میں تیری صدا ہے

    مرا دل تجھے ڈھونڈھتا ہے

    سیہ رات اشکوں کی شبنم میں سوئی ہوئی ہے

    ہر اک پل ہر اک لمحہ ماضی کا

    زندہ ہے موجود میں جاگتا ہے

    مگر تیرا پیکر

    تہ خاک اندھیروں کے مامن میں سویا ہوا ہے

    مرا دل کہ ماتم گر رفتگاں ہے

    تجھے ڈھونڈھتا ہے

    میں آسودۂ ریگ خاموش

    اس رات کی جلتی آنکھوں کو دیکھوں

    سیہ رات میں ٹمٹماتے ہوئے

    ان ستاروں سے پوچھوں

    خروشاں سمندر میں ڈوبا ہوا چاند

    کسی اجنبی سر زمیں پر تبسم کناں ہے

    نقوش کف پا کی منزل کہاں ہے؟

    یم زندگی سیل در سیل بہتا ہوا

    ایک لمحے کو رک کر پلٹ کر نہ دیکھے

    سیہ رات میں ٹمٹماتے ستاروں کے نیچے

    فقط ایک شب بے صدا جاگتی ہے

    شب بے صدا پوچھتی ہے

    بپھرتی ہوئی موج دریا کدھر سے چلی تھی؟

    کدھر کو چلی ہے؟

    مرا دل کہ ماتم گر رفتگاں ہے

    کسے ڈھونڈھتا ہے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نوحہ نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY