ندائے تخلیق

حسن نعیم

ندائے تخلیق

حسن نعیم

MORE BYحسن نعیم

    سکوت نیم شبی میں کسی نے دی آواز

    نعیمؔ دل سے نکالو نہ خار ہائے خلش

    سکون ہے تو اسی اضطراب میں کچھ ہے

    گزار شوق میں، سوز تلاش میں کچھ ہے

    جنوں کے جملہ مراحل سے تم گزر دیکھو

    جمال فکر سے آباد ہے دل ویراں

    شرار دل سے منور جہان فردا ہے

    یہ کون مجھ سے مخاطب ہے اتنی قربت سے

    یہ کس نے زخم کو دست شفا سے چھیڑا ہے؟

    اسی خیال میں گم تھا کہ پھر صدا آئی

    کمال عرض سخن جس کو تم سمجھ بیٹھے

    وہ عجز فکر ہے اقرار بے زبانی ہے

    نکل کے آؤ ذرا کوچۂ خبر دیکھو

    ہر ایک چاک گریباں ہر ایک گرد آلود

    نہ قتل گہہ سے ہراساں نہ سنگساروں سے

    کہ ایک عمر گزرتی ہے جستجو کرتے

    نظر کو تیز حقیقت کو رو بہ رو کرتے

    بس ایک تم کہ تمہارے قدم نہیں اٹھتے

    قیود عصر کی زنجیر کاٹنے والے

    فراز کوہ سے آواز دے رہے ہیں تمہیں

    پیمبروں کے مقامات دے رہے ہیں تمہیں

    رخ سحر سے ہٹاؤ ردائے شب للہ

    عذاب نار سے گزرو کہ طوف نور کرو

    جگر کے داغ سے رکھو حریم جاں روشن

    شعاع درد کو چومو گلے لگاؤ نعیمؔ

    سر وجود جھکائے سنا کیا سب کچھ

    تمام جسم تھا گویا نشانۂ آواز

    تمام روح تھی سامع تمام غم بیدار

    سکوت شب میں

    صدا گونجتی رہی پہروں

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    ندائے تخلیق نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY