نیند

MORE BYمخدومؔ محی الدین

    یہ کس پیکر کی رنگینی سمٹ کر دل میں آتی ہے

    مری بے کیف تنہائی کو یوں رنگیں بناتی ہے

    یہ کس کی جنبش مژگاں رباب دل کو چھوتی ہے

    یہ کس کے پیرہن کی سرسراہٹ گنگناتی ہے

    مری آنکھوں میں کس کی شوخیٔ لب کا تصور ہے

    کہ جس کے کیف سے آنکھوں میں میری نیند آتی ہے

    سکوت اور شانتی کے ہر قدم پر پھول برساتی

    اسیر کاکل شب گوں بنا کر مسکراتی ہے

    مری آنکھوں میں گھل جاتی ہے وہ کیف نظر بن کر

    مجھے قوس قزح کی چھاؤں میں پہروں سلاتی ہے

    سحر تک وہ مجھے چمٹائے رکھتی ہے کلیجے سے

    دبے پاؤں کرن خورشید کی آ کر جگاتی ہے

    مأخذ :
    • کتاب : Kulliyat-e-Makhdum Muhi-ud-din (Pg. 124)
    • Author : Farooq Argali
    • مطبع : Farid Book Depot Pvt. Ltd. (2011)
    • اشاعت : 2011

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY