پہلی موت

محمود ایاز

پہلی موت

محمود ایاز

MORE BY محمود ایاز

    رات بھر نرم ہواؤں کے جھونکے

    وقت کی موج رواں پر بہتے

    تیری یادوں کے سفینے لائے

    کہ جزیروں سے نکل کر آئے

    گزرا وقت کا دامن تھامے

    تری یادیں ترے غم کے سائے

    ایک اک حرف وفا کی خوشبو

    موجۂ گل میں سمٹ کر آئے

    ایک اک عہد وفا کا منظر

    خواب کی طرح گزرتے بادل

    تیری قربت کے مہکتے ہوئے پل

    میرے دامن سے لپٹنے آئے

    نیند کے بار سے بوجھل آنکھیں

    گرد ایام سے دھندلائے ہوئے

    ایک اک نقش کو حیرت سے تکیں

    لیکن اب ان سے مجھے کیا لینا

    میرے کس کام کے یہ نذرانے

    ایک چھوڑی ہوئی دنیا کے سفیر

    میرے غم خانے میں پھر کیوں آئے

    درد کا رشتہ رفاقت کی لگن

    روح کی پیاس محبت کے چلن

    میں نے منہ موڑ لیا ہے سب سے

    میں نے دنیا کے تقاضے سمجھے

    اب مرے پاس کوئی کیوں آئے

    رات بھر نوحہ کناں یاد کی بپھری موجیں

    میرے خاموش در و بام سے ٹکراتی ہیں

    میرے سینے کے ہر اک زخم کو سہلاتی ہے

    مجھے احساس کی اس موت پر سہہ دے کر

    صبح کے ساتھ نگوں سار پلٹ جاتی ہے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    پہلی موت نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY