Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

پتھراؤ

ظہور نظر

پتھراؤ

ظہور نظر

MORE BYظہور نظر

    درد تھمتا بھی نہیں

    حد سے گزرتا بھی نہیں

    بھول کر تجھ کو عجب حال ہوا ہے دل کا

    سالہا سال سے دل

    مندمل ہوتا ہوا گھاؤ ہے

    ڈوبتی ہے کوئی حسرت نہ ابھرتی ہے امید

    بحر آلام میں طوفاں ہے نہ ٹھہراؤ ہے

    افق زیست پہ طلعت ہے نہ تاریکی ہے

    دور تک دھند کا موہوم سا کجراؤ ہے

    ساحل چشم پہ تارے ہیں نہ موتی ہیں نہ اشک

    سوچ کا ہاتھ ہے احساس کا پتھراؤ ہے

    ڈوبتی بھی نہیں سیدھی بھی نہیں ہوتی ہے

    عمر کی لہر پہ جاں الٹی ہوئی ناؤ ہے

    تختیاں جس کی ترے پیار سے پیوستہ ہیں

    بادباں جس کا مرے سانس کا پھیلاؤ ہے

    سانس رکتا بھی نہیں

    ٹھیک سے چلتا بھی نہیں

    بھول کر تجھ کو عجب حال ہے دل کا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے