قید سے نجات

منیرؔ  شکوہ آبادی

قید سے نجات

منیرؔ  شکوہ آبادی

MORE BY منیرؔ  شکوہ آبادی

    بارے آئی نجات کی باری

    کھل گیا عقدۂ گرفتاری

    ہم کو منصب ملا رہائی کا

    قید کو جائیداد بیکاری

    پاؤں کو چھوڑ بھاگے مار دو سر

    سر کو پشتارۂ گرانباری

    کوچ ٹھہرا مقام غربت سے

    اب وطن چلنے کی ہے تیاری

    رخصت اے دوستان زندانی

    الوداع اے غم گرفتاری

    الرحیل اے مشقت ہر زور

    الفراق اے ہجوم ناچاری

    دال فے عین اے کتابت قید

    گاف میم اے حساب سرکاری

    دال چاول سے کہہ دو رخصت ہوں

    پانی میں ڈوبے یہ نمک کھاری

    مچھلیوں سے کہو کہ ہٹ کے سڑیں

    گھاس کھودے یہاں کی ترکاری

    چینی برہما ملائی مدراسی

    اہل آشام جنگلی تاتاری

    اپنے دیدار سے معاف کریں

    اپنی باتوں سے دیں سبکساری

    کالے پانی سے ہوتے ہیں رخصت

    اشک شادی ہیں آنکھوں سے جاری

    بیٹھتے ہیں جہاز دوری پر

    اٹھتے ہیں لنگر گرانباری

    کرم اے خضر المدد اے نوح

    رحم اے فضل حضرت باری

    السلام اے خروش بحر محیط

    السفر اے سفینۂ جاری

    زاد راہ سفر توکل ہے

    رہنمائی کو اس کی غفاری

    ہے ارادہ کہ فکر شعر کریں

    تاکہ ہو دور رنج بیکاری

    بسکہ برسوں رہا ہوں زنداں میں

    بھولی قصر سخن کی معماری

    مآخذ:

    • کتاب : Urdu Mein Qaumi Shairi Ke Sau Saal (Pg. 109)
    • Author : Ali Jawad Zaidi
    • مطبع : Uttar Pradesh Urdu Acadmi (Lucknow) (Edition I 1982,Editon II 2010)
    • اشاعت : Edition I 1982,Editon II 2010

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY