رات جدائی کی رات

شہریار

رات جدائی کی رات

شہریار

MORE BYشہریار

    کٹتی نہیں سرد رات

    ڈھلتی نہیں زرد رات

    رات جدائی کی رات

    خالی گلاسوں کی سمت

    تکتی ہوئی آنکھ میں

    قطرۂ شبنم نہیں

    کون لہو میں بہے

    میری رگوں میں چلے

    تیز ہو سانسوں کا شور

    جلنے لگے پور پور

    آئے سمندر میں جوش

    گر پڑے دیوار ہوش

    سوکھی ہوئی شاخ پر

    برگ و ثمر کھل اٹھیں

    آؤ مری نیند کی

    بکھری ہوئی پتیاں

    آج سمیٹو ذرا

    کب سے کھلا ہے بدن

    اس کو لپیٹو ذرا

    ایک شکن دو شکن

    بستر تنہائی پر

    پھر سے بڑھا دو ذرا

    مجھ کو رلا دو ذرا

    ایک پہر رات ہے

    رات جدائی کی رات

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY