روح لبوں تک آ کر سوچے

احمد ندیم قاسمی

روح لبوں تک آ کر سوچے

احمد ندیم قاسمی

MORE BYاحمد ندیم قاسمی

    روح لبوں تک آ کر سوچے کیسے چھوڑوں قریۂ جاں

    یوسف قصر شہی میں بھی کب بھولا کنعاں کی گلیاں

    موت قریب آئی تو دنیا کتنی مقدس لگتی ہے

    کاہش دل بھی خواہش دل ہے آفت جاں بھی راحت جاں

    میری وحشت کو تو بہت تھی گوشۂ چشم یار کی سیر

    یوں تو عدم میں وسعت ہوگی عرش بہ عرش کراں بہ کراں

    غنچے اب تک رنگ بھرے ہیں اب تک ہونٹ امنگ بھرے

    ٹوٹی پھوٹی قبروں سے ہیں پتھرائی آنکھیں نگراں

    صرف اک نگہ گرم سے ٹوٹیں شعلوں میں پروان چڑھیں

    ہائے یہ نازک نازک رشتے ہائے یہ بزم شیشہ گراں

    دشت و دمن میں کوہ کمر میں بکھرے ہوئے ہیں پھول ہی پھول

    روئے نگار گیتی پر ہیں ثبت مرے بوسوں کے نشاں

    آنکھ کی اک جھپکی میں بیتا کتنے برس کا قرب جمال

    عشق کے اک پل میں گزرے ہیں کتنے قرن کتنی صدیاں

    ساری دنیا میرا کعبہ سب انساں میرے محبوب

    دشمن بھی دو ایک تھے لیکن دشمن بھی تو تھے انساں

    درد حیات کہیں اب جا کر بننے لگا تھا حسن حیات

    کس کو خبر تھی محو رہے گی قطع سفر میں عمر رواں

    جنت کی یخ بستگیوں کو گرمائے گا اس کا خیال

    صبح ابد تک جمی رہے یہ انجمن آتش نفساں

    مآخذ:

    • کتاب : kulliyat-e-ahmad nadiim qaasmii (Pg. 246)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY