aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

سمندر

جمیل ملک

سمندر

جمیل ملک

MORE BYجمیل ملک

    مرا دل اچھلتا سمندر

    مرا جذبۂ بے اماں

    میرا ایک ایک ارماں

    اچھلتے سمندر کی صدیوں پرانی چٹانوں سے ٹکرا کے یوں ریزہ ریزہ ہوا ہے

    کہ گھائل سمندر کے سینے میں محشر بپا ہے

    ہر اک موج درد آشنا ہے

    ہر اک قطرۂ آب انمول ہے گوہر بے بہا ہے

    میں ہستی کے ساحل کا مبہوت و حیراں مسافر

    مرے زرد چہرے پہ جمتی ہوئی ریت

    میرا سرکتا ہوا جسم

    سب کی نگاہوں کا مرکز بنا ہے

    مگر کوئی ایسا نہیں

    کوئی بھی تو نہیں

    جو مری منجمد گہری جھیلوں سے گزرے

    مرے دل کے قلزم میں اترے

    جہاں کی ہر اک موج درد آشنا ہے

    ہر اک قطرۂ آب انمول ہے گوہر بے بہا ہے

    جہاں روح تن سے جدا ہے

    ازل کے مسافر کی منزل ابد ہے بقا ہے

    مأخذ:

    auraq salnama magazines (Pg. e-260 p-248)

    • مصنف: Wazir Agha,Arif Abdul Mateen
      • اشاعت: 1967
      • ناشر: Daftar Mahnama Auraq Lahore
      • سن اشاعت: 1967

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے