سروجنی نائیڈو

کیفی اعظمی

سروجنی نائیڈو

کیفی اعظمی

MORE BYکیفی اعظمی

    عزیز ماں مری ہنس مکھ مری بہادر ماں

    تمام جوہر فطرت جگا دیے تو نے

    محبت اپنے چمن سے گلوں سے خاروں سے

    محبتوں کے خزانے لٹا دیے تو نے

    بنا بنا کے مٹائے گئے نقوش عمل

    ترے بغیر مکمل نہ ہو سکی تصویر

    وہ خواب جھانسی کی رانی کو جس نے چونکایا

    ترا جہاد مسلسل اسی کی ہے تعبیر

    اسے حیات کا سولہ سنگار کہتے ہیں

    تری جبیں پہ ہیں کچھ سلوٹیں بھی ٹیکا بھی

    نظر میں جذب یقیں دل میں سوز آزادی

    دہکتا پھول بھی ہے تو مہکتا شعلہ بھی

    ذرا زمین کو محور پہ گھوم لینے دے

    سماج تجھ سے ترا سوز و ساز مانگے گی

    جمال سیکھے گا خود اعتمادیاں تجھ سے

    حیات نو ترے دل کا گداز مانگے گی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY