سو اب بھی ہے

نظر برنی

سو اب بھی ہے

نظر برنی

MORE BYنظر برنی

    وہی بیگم کی خوں خواری جو پہلے تھی سو اب بھی ہے

    وہی دیرینہ بیماری جو پہلے تھی سو اب بھی ہے

    وہی ٹر ٹر وہی خفگی وہی غمزے وہی عشوے

    وہی طعنوں کی بیماری جو پہلے تھی سو اب بھی ہے

    بڑھاپے میں بھی ان کو شوق ہیں عہد جوانی کے

    ''لپ اسٹک'' کی خریداری جو پہلے تھی سو اب بھی ہے

    وہی ہے روٹھنا ان کا وہی میکے کی ہے دھمکی

    وہی ذلت وہی خواری جو پہلے تھی سو اب بھی ہے

    کبھی ہے ساس کا رونا کبھی نندوں سے ہے جھگڑا

    زباں ہے ان کی ''دودھاری'' جو پہلے تھی سو اب بھی ہے

    فقط اپنے ہی میکے کی کیا کرتی ہیں تعریفیں

    میری اماں سے بے زاری جو پہلے تھی سو اب بھی ہے

    ادب کا ڈاکٹر بن کر ملا کیا ہم غریبوں کو

    غریبی اور بیکاری جو پہلے تھی سو اب بھی ہے

    ہوئی شادی ہوئے بچے نظرؔ کا حال ہے پتلا

    وہی اب بھی ہے لاچاری جو پہلے تھی سو اب بھی ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY