سوچ

MORE BYفہمیدہ ریاض

    رات اک رنگ ہے اک راگ ہے اک خوشبو ہے

    مہرباں رات مرے پاس چلی آئے گی

    رات کا نرم تنفس مجھے چھو جائے گا

    دودھیا پھول چنبیلی کے مہک اٹھیں گے

    رات کے ساتھ مرا غم بھی چلا آئے گا

    اب مرے خانۂ دل میں بھی چراغاں ہوگا

    یونہی ہر شب جو پگھلتی ہے سیاہی شب کی

    اک لرزتا ہوا سایہ سا چلا آتا ہے

    جس کے سینے میں دھڑکتا ہے طلائی مہتاب

    رات کے پیار میں گم ذہن اگر یہ پوچھے

    کون ہو تم مرے مہمان اندھیرے میں چھپے

    چار اطراف بکھرتے ہوئے سناٹے میں

    میرے افکار یونہی گونج کے رہ جاتے ہیں

    ایسا لگتا ہے نہیں اور کوئی بھی موجود

    بے کراں رات میں گھل جاتا ہے خود میرا وجود

    مأخذ :
    • Patthar Ki Zaban

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY