صبح صادق

درشن سنگھ

صبح صادق

درشن سنگھ

MORE BYدرشن سنگھ

    دلچسپ معلومات

    (گورونانک دیو جی)

    رہ گیا راہ میں جب کچھ بھی نہ کانٹوں کے سوا

    تیرگی جھوٹ کی جب چھا گئی سچائی پر

    افق زندہ و پائندۂ ننکانہ سے

    ہنس پڑی ایک کرن وقت کی تنہائی پر

    دل کے سنسان کھنڈر میں کوئی نغمہ جاگا

    آنکھ ملتی ہوئی اک صبح بیاباں سے اٹھی

    فکر آزاد ہوئی ذہن کے جالے ٹوٹے

    اور ایقان کی لو سینۂ انساں سے اٹھی

    زہر میں ڈوب گئی تھیں جو زبانیں یکسر

    ان پہ شیرینیٔ وحدت کے ترانے آئے

    جسم مرتا ہے مگر روح کہاں مرتی ہے

    روح اک نور ہے اور جسم تھرکتے سائے

    جسم کانٹوں سے گزرتا ہے گزر جانے دو

    روح وہ پھول ہے جس پر نہ خزاں آئے گی

    روح پی لے گی جو عرفان و محبت کی شراب

    مستی و کیف ہمیشہ کے لیے پائے گی

    پیر ننگانہ تری روح صداقت کو سلام

    جاوداں پرچم الفت ترا لہراتا ہے

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY