سبھاش چندر بوس بہادر شاہ ظفر کے مزار پر

جگن ناتھ آزاد

سبھاش چندر بوس بہادر شاہ ظفر کے مزار پر

جگن ناتھ آزاد

MORE BYجگن ناتھ آزاد

    السلام اے عظمت‌ ہندوستاں کی یادگار

    اے شہنشاہ دیار دل فقیر بے دیار

    آج پہلی بار تیری قبر پر آیا ہوں میں

    بے نوا ہوں نذر کو بے لوث دل لایا ہوں میں

    گردش تقدیر کے ہاتھوں وطن سے دور ہوں

    ایک بلبل ہوں مگر صحن چمن سے دور ہوں

    شوق آزادی کا مجھ کو کھینچ لایا ہے یہاں

    آج دشمن ہے زمیں میری عدو ہے آسماں

    میں بھی ہوں اپنے وطن سے دور تو بھی دور ہے

    ہاں رضائے پاک یزداں کو یہی منظور ہے

    میرا دامن بھی یہاں کی خاک سے آلودہ ہے

    فرق صرف اتنا ہے میں آوارہ تو آسودہ ہے

    اے شہ خوابیدہ اے تقدیر بیدار وطن

    آئنہ میری نگاہوں پر ہے او بار وطن

    میرے دل کو یاد ہے اب تک وہ ستاون کی جنگ

    جس کے بعد اس سرزمیں پہ چھا گئے اہل فرنگ

    میری نظروں میں ہے میرٹھ اور دہلی کا زوال

    جانتا ہوں میں جو تھا جھانسی کی رانی کا مآل

    میں نہیں بھولا ابھی انجام نانا فرنویس

    ہے نظر میں کوشش ناکام نانا فرنویس

    داستاں جیسے بھی ہو گزری وہ سب معلوم ہے

    تیرے دلبندوں پہ جو گزری وہ سب معلوم ہے

    یہ وطن روندا ہے جس کو مدتوں اغیار نے

    جس پہ ڈھائے ظلم لاکھوں چرخ ناہنجار نے

    جس کو رکھا مدتوں قسمت نے ذلت آشنا

    جس نے ہر پہلو میں دیکھی پستیوں کی انتہا

    آج پھر اس ملک میں اک زندگی کی لہر ہے

    خاک سے افلاک تک تابندگی کی لہر ہے

    آج پھر اس ملک کے لاکھوں جواں بیدار ہیں

    حریت کی راہ میں مٹنے کو جو تیار ہیں

    آج پھر ہے بے نیام اس ملک کی شمشیر دیکھ

    سونے والے جاگ اپنے خواب کی تعبیر دیکھ

    اس طرح لرزے میں ہے بنیاد ایوان فرنگ

    کھا چکے ہیں مات گویا شیشہ بازان فرنگ

    حب قومی کے ترانوں سے ہوا لبریز ہے

    اور توپوں کی دنادن سے فضا لبریز ہے

    شور گیر و دار کا ہے پھر فضاؤں میں بلند

    آج پھر ہمت نے پھینکی ہے ستاروں پر کمند

    پھر امنگیں آرزوئیں ہیں دلوں میں بے قرار

    قوم کو یاد آ گیا ہے اپنا گم گشتہ وقار

    نوجوانوں کے دلوں میں سرفروشی کی امنگ

    عشق بازی لے گیا ہے عقل بیچاری ہے دنگ

    آج پھر اس دیس میں جھنکار تلواروں کی ہے

    کچھ نرالی کیفیت پھر دیس کے پیاروں کی ہے

    جو توانائی ارادوں میں ہے کہساروں کی ہے

    ذرے ذرے میں نہاں تابندگی تاروں کی ہے

    یہ نظارہ آہ لفظوں میں سما سکتا نہیں

    آنکھ جو کچھ دیکھتی ہے لب پہ آ سکتا نہیں

    فتح نصرت کی دعاؤں سے ہوا معمور ہے

    نعرۂ جے ہند سے ساری فضا معمور ہے

    مجھ کو اے شاہ وطن اپنے ارادوں کی قسم

    جن کے سر کاٹے گئے ان شاہ زادوں کی قسم

    تیرے مرقد کی مقدس خاک کی مجھ کو قسم

    میں جہاں ہوں اس فضائے پاک کی مجھ کو قسم

    اپنے بھوکے جاں بہ لب بنگال کی مجھ کو قسم

    حاکموں کے دست پرور کال کی مجھ کو قسم

    لال قلعے کے زوال و شہر دہلی کی قسم

    محسن دہلی مآل شہر دہلی کی قسم

    میں تری کھوئی ہوئی عظمت کو واپس لاؤں گا

    اور ترے مرقد پہ نصرت یاب ہو کر آؤں گا

    تیغ ہندی جس کا لوہا مانتا ہے اک جہاں

    جس کی تیزی کی گواہی دے رہا ہے آسماں

    تیغ ہندی جس کو میں نے کر دیا ہے بے نیام

    جس کا شیوہ حریت کیشی جہانگیری ہے کام

    جس نے پوری منصفی کی آج تک دنیا کے ساتھ

    ظلم کی دشمن ہے جو اک ظلم بے پردا کے ساتھ

    ہر قدم پر جس نے باطل کو ملایا خاک میں

    جس کے ساکھوں کی ابھی تک گونج ہے افلاک میں

    آج پھر اپنی نظر جس کی چمک سے خیرہ ہے

    جس کی تابانی سے روشن اک جہان تیرا ہے

    اک جزیرے کے حسیں ساحل سے جب ٹکرائے گی

    چین سے مجھ کو بھڑکتی آگ میں نیند آئے گی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY