تہ خنجر

MORE BYاویس احمد دوراں

    اقلیت کہیں کی ہو تہ خنجر ہی رہتی ہے

    ہلاکت خیز ہاتھوں کے ہزاروں جبر سہتی ہے

    خس و خاشاک کی مانند سیل غم میں بہتی ہے

    نہ کوئی خواب آنکھوں میں نہ دل میں آسرا کوئی

    نہ جوئے خوں سے بچنے کا نظر میں راستہ کوئی

    نہ مستقبل کی آوازیں نہ منزل کی صدا کوئی

    خود اپنی ہی فضا میں خوف کا احساس ہر لمحہ

    عدم محفوظیت کا دور تک غم ناک سناٹا

    سہانی ہو کے بھی بے رونق و بے کیف سی دنیا

    حقارت کی نظر نفرت کی چنگاری تعاقب میں

    مصیبت آگے آگے ذلت و خواری تعاقب میں

    جدھر جائے وہیں طوفان بے زاری تعاقب میں

    زباں معتوب تہذیب و ثقافت دار کی زد میں

    گھر آنگن عزت و ناموس کل تلوار کی زد میں

    لبوں کی مسکراہٹ آتشیں یلغار کی زد میں

    اقلیت جہاں بھی ہے یہی اس کا مقدر ہے

    یہ زخمی بے اماں مخلوق ہر سو زیر خنجر ہے

    بتا اے دل یہ غم کی رات ہے یا روز محشر ہے

    مأخذ :
    • کتاب : Ababeel (Pg. 16)
    • Author : Owais Ahmad Dauran
    • مطبع : label litho press Ramna Road Patna-4 (1986)
    • اشاعت : 1986

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے