تضمین بر اشعار غالب

ز خ ش

تضمین بر اشعار غالب

ز خ ش

MORE BYز خ ش

    درد الفت یوں ہی تھا رگ رگ میں ساری ہائے ہائے

    کیوں لگایا پھر وفا کا زخم کاری ہائے ہائے

    تجھ سا بے فکر اور کسی کی غم گساری ہائے ہائے

    درد سے میرے ہو تجھ کو بے قراری ہائے ہائے

    کیا ہوئی ظالم تری غفلت شعاری؟ ہائے ہائے

    کچھ ہنسی تھا شرکت رنج و الم کا حوصلہ

    آہ یہ ایک خوگر ناز و نعم کا حوصلہ

    کیوں کیا بے قوت دل اس ستم کا حوصلہ

    تیرے دل میں گر نہ تھا آشوب غم کا حوصلہ

    تو نے پھر کیوں کی تھی میری غم گساری ہائے ہائے

    تھا مرا غم خوار بن کر پھولنا پھلنا محال

    کٹ گیا آخر نہ تیرا نخل عمر اے نونہال

    آہ ناداں کیوں نہ سوچا میری الفت کا مآل

    کیوں مری غم خوارگی کا تجھ کو آیا تھا خیال

    دشمنی اپنی تھی میری دوست داری ہائے ہائے

    جیتے جی ہم تم رہے گر یک دل و یکجا تو کیا

    تا دم آخر بھرا گر دم محبت کا تو کیا

    عمر بھر پیماں رہا منت کش ایفا تو کیا

    عمر بھر کا تو نے پیمان وفا باندھا تو کیا

    عمر کو بھی تو نہیں ہے پائیداری ہائے ہائے

    چھوڑ کر زنداں میں مجھ کو تو نے راہ خلد لی

    تیرے زخم ناوک فرقت سے میں جیتی بچی

    ہو چکی بس اعتماد دل کی شیخی کرکری

    خاک میں ناموس پیمان محبت مل گئی

    اٹھ گئی دنیا سے راہ رو رسم یاری ہائے ہائے

    وا دریغا تھا دل بیمار غم کو آسرا

    آب تیغ ناز سے اک دن مجھے ہوگی شفا

    حسرت اے شوق جراحت رخصت اے ذوق فنا

    ہاتھ ہی تیغ آزما کا کام سے جاتا رہا

    دل پہ اک لگنے نہ پایا زخم کاری ہائے ہائے

    غم ہرے کرتی ہے فصل اشک بار برشگال

    مثل قسمت تار ہیں لیل و نہار برشگال

    کب کھلے گا ہائے یہ اب سایہ دار برشگال

    کیسے کاٹوں ہائے میں شب ہائے تار برشگال

    ہے نظر خو کردۂ اختر شماری ہائے ہائے

    ایک دن وہ بھی تھا جب دم بھر کی فرقت تھی محال

    آہ اک دن یہ بھی ہے جب رونما ہے انفعال

    یہ الم کب تک سہوں کب تک نہ ہو جینا وبال

    گوش مہجور پیام و چشم محروم جمال

    ایک دل تس پر یہ نا امیدواری ہائے ہائے

    RECITATIONS

    عذرا نقوی

    عذرا نقوی

    عذرا نقوی

    تضمین بر اشعار غالب عذرا نقوی

    مأخذ :
    • کتاب : Jadeed Shora-e-Urdu (Pg. 938)
    • Author : Dr. Abdul Wahid
    • مطبع : Feroz sons Printers Publishers and Stationers

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY