تیرے بعد

سیف الدین سیف

تیرے بعد

سیف الدین سیف

MORE BY سیف الدین سیف

    مری نگاہ کو اب بھی تری ضرورت ہے

    دل تباہ کو اب بھی تری ضرورت ہے

    خروش نالہ تڑپتا ہے تیری فرقت میں

    سکوت آہ کو اب بھی تری ضرورت ہے

    یہ صبح و شام تری جستجو میں پھرتے ہیں

    کہ مہر و ماہ کو اب بھی تری ضرورت ہے

    بہار‌‌ زلف پریشاں لیے ہے گلشن میں

    گل و گیاہ کو اب بھی تری ضرورت ہے

    زمانہ ڈھونڈ رہا ہے کوئی نیا طوفاں

    سکون راہ کو اب بھی تری ضرورت ہے

    وہ ولولے وہ امنگیں وہ جستجو نہ رہی

    تری سپاہ کو اب بھی تری ضرورت ہے

    خرد خموش جنوں بے خروش ہے اب تک

    دل و نگاہ کو اب بھی تری ضرورت ہے

    بیاں ہو غم کا فسانہ دل تپاں سے کہاں

    یہ بار اٹھے گا مری جان ناتواں سے کہاں

    ملا نہ پھر کہیں لطف کلام تیرے بعد

    حدیث شوق رہی نا تمام تیرے بعد

    جو تیرے دست‌‌‌ حوادث شکن میں دیکھی تھی

    وہ تیغ پھر نہ ہوئی بے نیام تیرے بعد

    بجھی بجھی سی طبیعت ہے بادہ خواروں کی

    اداس اداس ہیں مینا و جام تیرے بعد

    بنا ہے حرف شکایت سکوت لالہ و گل

    بدل گیا ہے چمن کا نظام تیرے بعد

    ادائے حسن کا لطف خرام بے معنی

    سرود‌‌ شوق کی لذت حرام تیرے بعد

    ترس گئی ہے سماعت تری صداؤں کو

    سنا نہ پھر کہیں تیرا پیام تیرے بعد

    وہ انقلاب کی رو پھر پلٹ گئی افسوس

    بلند بام ہیں پھر زیر دام تیرے بعد

    مثال نجم سحر جگمگا کے ڈوب گیا

    ہمیں سفینہ کنارے لگا کے ڈوب گیا

    مآخذ:

    • Book : Muntakhab Shahkar Nazmon Ka Album) (Pg. 177)
    • Author : Munavvar Jameel
    • مطبع : Haji Haneef Printer Lahore (2000)
    • اشاعت : 2000

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY