وہ جو شاعر تھا

گلزار

وہ جو شاعر تھا

گلزار

MORE BYگلزار

    وہ جو شاعر تھا، چپ سا رہتا تھا

    بہکی بہکی سی باتیں کرتا تھا

    آنکھیں کانوں پہ رکھ کے سنتا تھا

    گونگی خاموشیوں کی آوازیں!

    جمع کرتا تھا چاند کے سائے

    گیلی گیلی سی نور کی بوندیں

    اوک میں بھر کے کھڑکھڑاتا تھا

    روکھے روکھے سے رات کے پتے

    وقت کے اس گھنیرے جنگل میں

    کچے پکے سے لمحے چنتا تھا

    ہاں، وہی، وہ عجیب سا شاعر

    رات کو اٹھ کے کہنیوں کے بل

    چاند کی ٹھوڑی چوما کرتا ہے!!

    چاند سے گر کے مر گیا ہے وہ

    لوگ کہتے ہیں خود کشی کی ہے

    مأخذ :
    • کتاب : Chand Pukhraj Ka (Pg. 40)
    • Author : Gulzar
    • مطبع : Roopa And Company (1995)
    • اشاعت : 1995

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے