ذاکر‌ حسین

MORE BYکنور مہیندر سنگھ بیدی سحر

    تیری فطرت میں ہے گوبندؔ کا آثار مگر

    ابنؔ مریم کا مقلد ترا کردار مگر

    رام اور کرشن کے جیون سے تجھے پیار مگر

    بادۂ حب محمد سے بھی سرشار مگر

    سکھ نہ عیسائی نہ ہندو نہ مسلمان ہے تو

    تیرا ایمان یہ کہتا ہے کہ انسان ہے تو

    ہندوؤں سے تجھے لینا ہے ذہانت کا کمال

    اور سکھوں سے شجاعت کہ نہ ہو جس کی مثال

    اہل اسلام سے لینا ہے عبادت کا جلال

    اور عیسائیوں سے صبر لگن اور استقلال

    ان عناصر کو محبت سے ملانا ہوگا

    کشور ہند کا انسان بنانا ہوگا

    من کے مندر کو منور کرے نور اسلام

    کعبۂ دل میں رہے شام و سحر رام کا نام

    کبھی گنگا کبھی کوثر سے ملیں جام پہ جام

    یوں بنیں شیر و شکر تیری حکومت میں عوام

    رام ہو اور رحیم اور نہ ہونے پائے

    اب کوئی بچہ یتیم اور نہ ہونے پائے

    تجھ سے امید یہ ہے کہ ملک میں افلاس نہ ہو

    تنگ دستی نہ آئے کہیں یاس نہ ہو

    الم و رنج کا دکھ درد کا احساس نہ ہو

    اور تعصب کی کسی قوم میں بو باس نہ ہو

    عنصر امن شکن کو تہ و بالا کر دے

    تو جو آیا ہے تو دنیا میں اجالا کر دے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY