Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

عزیز فیصل کے اشعار

819
Favorite

باعتبار

ہے کامیابیٔ مرداں میں ہاتھ عورت کا

مگر تو ایک ہی عورت پہ انحصار نہ کر

میں ایک بوری میں لایا ہوں بھر کے مونگ پھلی

کسی کے ساتھ دسمبر کی رات کاٹنی ہے

وہ تیس سال سے ہے فقط بیس سال کی

چہرے پہ آ چکی ہے بزرگی جمال کی

دے رہے ہیں اس لیے جنگل میں دھرنا جانور

ایک چوہے کو رہائش کے لیے بل چاہیئے

کتنی مزاحیہ ہے یہ بوتل کے جن کی بات

آقا اب انقلاب ہے دو چار دن کی بات

کودے ہیں اس کے صحن میں دو چار شیر دل

ہم فیس بک کی وال سے آگے نہیں گئے

وے بالوں میں کلر لگوا چکا ہے

یہ دھوکہ پانچ سو میں کھا چکا ہے

وہ ساڑی جیولری کے تحائف پہ تھی بضد

ہم سو روپے کی شال سے آگے نہیں گئے

مورخ لکھ نہ دیں سقراط مجھ کو

میں لسی کا پیالہ پی رہا ہوں

عشق میں یہ تفرقہ بازی بہت معیوب ہے

پیار کو شیعہ وہابی اور سنی مت سمجھ

ایسی خواہش کو سمجھتا ہوں میں بالکل نیچرل

ڈاکٹر کو شہر کا ہر مرد و زن ال چاہئے

نہ یہ قانون کام آیا تھا رانجھے کے ذرا سا بھی

اسی کو بھینس ملتی ہے ہو جس کے ہاتھ میں لاٹھی

کیبل پہ ایک شیف سے جلدی میں سیکھ کر

لائی وہ شملہ مرچ کا حلوہ مرے لیے

تھکا ہارا نکل کر گھر سے اپنے

وہ پھر آفس میں سونے جا چکا ہے

ایسے بندوں کو جانتا ہوں میں

جن کا واحد علاج مالش ہے

وہ افطاری سے پہلے چکھتے چکھتے

کهجوریں اور پکوڑے کھا چکا ہے

دو خط بنام زوجہ و جاناں لکھے مگر

دونوں خطوں کا اس سے لفافہ بدل گیا

دس بارہ غزلیات جو رکھتا ہے جیب میں

بزم سخن میں ہے وہ نشانی وبال کی

یہ دیا میسج ٹوئیٹر پر فسادی شخص نے

اس کو جلتی کے لیے فی الفور آئل چاہیئے

بیگم سے کہہ رہا تھا یہ کوئی خلا نورد

بیٹھی ہوئی ہے چاند پہ ''گڑیا'' مرے لیے

Recitation

Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

GET YOUR PASS
بولیے