noImage

بیتاب عظیم آبادی

1866 - 1928 | پٹنہ, ہندوستان

شاد عظیم آبادی کے شاگردوں میں نمایاں

شاد عظیم آبادی کے شاگردوں میں نمایاں

بیتاب عظیم آبادی کی اشعار

اثر نہ پوچھیے ساقی کی مست آنکھوں کا

یہ دیکھیے کہ کوئی ہوشیار باقی ہے

تڑپ کے رہ گئی بلبل قفس میں اے صیاد

یہ کیا کہا کہ ابھی تک بہار باقی ہے

کتنے الزام آخر اپنے سر

تم نے غیروں کو سر چڑھا کے لئے

لڑ گئی ان سے نظر کھنچ گئے ابرو ان کے

معرکے عشق کے اب تیر و کماں تک پہنچے