Bhagwan Das Ejaz's Photo'

بھگوان داس اعجاز

1932 | دلی, ہندوستان

آج مجھی پر کھل گیا میرے دل کا راز

آئی ہے ہنستے سمے رونے کی آواز

بھیتر کیا کیا ہو رہا اے دل کچھ تو بول

ایک آنکھ روئے بہت ایک ہنسے جی کھول

آسمان پر چھا گئی گھٹا گھور گھنگور

جائیں تو جائیں کہاں ویرانے میں شور

ہوگی اک دن گھر مرے پھولوں کی برسات

میں پگلا اس آس میں ہنستا ہوں دن رات

جو دیکھا سمجھا سنا غلط رہا میزان

اور نکٹ آ زندگی ہو تیری پہچان

ہم جگ میں کیسے رہے ذرا دیجئے دھیان

رات گزاری جس طرح دشمن گھر مہمان

کہنے لگے اب آئیے سر پر ہے تہوار

گھر میرا نزدیک ہے تاروں کے اس پار

سینے کے بل رینگ کر سیمائیں کیں پار

میں بونوں کے گاؤں سے گزرا پہلی بار

کہیں گگن کے پار ہوں کہیں بیچ پاتال

میرے چاروں اور ہے تصویروں کا جال

Added to your favorites

Removed from your favorites