noImage

حامد سروش

حامد سروش کے شعر

میں نے بھیجی تھی گلابوں کی بشارت اس کو

تحفۃً اس نے بھی خوشبوئے وفا بھیجی ہے

کتنے غم ہیں جو سر شام سلگ اٹھتے ہیں

چارہ گر تو نے یہ کس دکھ کی دوا بھیجی ہے