Hasan Naim's Photo'

حسن نعیم

1927 - 1991 | پٹنہ, ہندوستان

غزل

امید و یاس نے کیا کیا نہ گل کھلائے ہیں

نعمان شوق

پیکر_ناز پہ جب موج_حیا چلتی تھی

نعمان شوق

جب کبھی میرے قدم سوئے_چمن آئے ہیں

نعمان شوق

جبر_شہی کا صرف بغاوت علاج ہے

نعمان شوق

جنگلوں کی یہ مہم ہے رخت_جاں کوئی نہیں

نعمان شوق

حسن کے سحر و کرامات سے جی ڈرتا ہے

نعمان شوق

خواب کی راہ میں آئے نہ در_و_بام کبھی

نعمان شوق

خیر سے دل کو تری یاد سے کچھ کام تو ہے

نعمان شوق

رشک اپنوں کو یہی ہے ہم نے جو چاہا ملا

نعمان شوق

غم سے بکھرا نہ پائمال ہوا

نعمان شوق

کچھ اصولوں کا نشہ تھا کچھ مقدس خواب تھے

نعمان شوق

کسی حبیب نے لفظوں کا ہار بھیجا ہے

نعمان شوق

کسے بتاؤں کہ وحشت کا فائدہ کیا ہے

نعمان شوق

یاد کا پھول سر_شام کھلا تو ہوگا

نعمان شوق

نظم

ایک درخت ایک تاریخ

نعمان شوق

بے_التفاتی

نعمان شوق

تشویش

نعمان شوق

خیمۂ یاد

نعمان شوق

ندائے_تخلیق

نعمان شوق

Recitation

aah ko chahiye ek umr asar hote tak SHAMSUR RAHMAN FARUQI