Hasan Naim's Photo'

حسن نعیم

1927 - 1991 | پٹنہ, ہندوستان

غزل 54

اشعار 27

کچھ اصولوں کا نشہ تھا کچھ مقدس خواب تھے

ہر زمانے میں شہادت کے یہی اسباب تھے

غم سے بکھرا نہ پائمال ہوا

میں تو غم سے ہی بے مثال ہوا

گرد شہرت کو بھی دامن سے لپٹنے نہ دیا

کوئی احسان زمانے کا اٹھایا ہی نہیں

  • شیئر کیجیے

اتنا رویا ہوں غم دوست ذرا سا ہنس کر

مسکراتے ہوئے لمحات سے جی ڈرتا ہے

خیر سے دل کو تری یاد سے کچھ کام تو ہے

وصل کی شب نہ سہی ہجر کا ہنگام تو ہے

کتاب 6

اشعار

 

1971

اشعار

 

1971

دبستاں

 

1992

غزل نامہ

 

1980

حسن نعیم

 

2006

حسن نعیم اور نئی غزل

 

2002

 

آڈیو 19

امید و یاس نے کیا کیا نہ گل کھلائے ہیں

پیکر_ناز پہ جب موج_حیا چلتی تھی

جب کبھی میرے قدم سوئے_چمن آئے ہیں

Recitation

aah ko chahiye ek umr asar hote tak SHAMSUR RAHMAN FARUQI

مزید دیکھیے

"پٹنہ" کے مزید شعرا

  • مبارک عظیم آبادی مبارک عظیم آبادی
  • کلیم عاجز کلیم عاجز
  • جمیلہ خدا بخش جمیلہ خدا بخش
  • سلطان اختر سلطان اختر
  • شاد عظیم آبادی شاد عظیم آبادی
  • خورشید اکبر خورشید اکبر
  • بسمل  عظیم آبادی بسمل  عظیم آبادی
  • امداد امام اثرؔ امداد امام اثرؔ
  • حسرتؔ عظیم آبادی حسرتؔ عظیم آبادی
  • عالم خورشید عالم خورشید