noImage

جمیل نظر

1925 - 1993 | کراچی, پاکستان

اپنے بارے میں جب بھی سوچا ہے

اس کا چہرہ نظر میں ابھرا ہے

نہ قرب ذات ہی حاصل نہ زخم رسوائی

عجیب لگتا ہے اب خود سے رابطہ رکھنا

دیکھیے تو ہے کارواں ورنہ

ہر مسافر سفر میں تنہا ہے

بے وفا ہی سہی زمانے میں

ہم کسی فن کی انتہا تو ہوئے

بڑا عجیب ہے تہذیب ارتقا کے لیے

تمام عمر کسی اک کو ہم نوا رکھنا

Added to your favorites

Removed from your favorites