Kaif Azimabadi's Photo'

کیف عظیم آبادی

1937

کیف عظیم آبادی کے اشعار

دیوار و در پہ خون کے چھینٹے ہیں جا بہ جا

بکھرا ہوا ہے رنگ حنا تیرے شہر میں

تم سمندر کی رفاقت پہ بھروسہ نہ کرو

تشنگی لب پہ سجائے ہوے مر جاؤ گے

خوشبوئے حنا کہنا نرمیٔ صبا کہنا

جو زخم ملے تم کو پھولوں کی قبا کہنا

نکل آئے تنہا تری رہگزر پر

بھٹکنے کو ہم کارواں چھوڑ آئے

Recitation

aah ko chahiye ek umr asar hote tak SHAMSUR RAHMAN FARUQI

Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

GET YOUR FREE PASS
بولیے