P P Srivastava Rind's Photo'

پی.پی سری واستو رند

1950 | نوئیڈا, ہندوستان

غزل

اندھیرے بند کمروں میں پڑے تھے

پی.پی سری واستو رند

اندھیرے ڈھونڈنے نکلے کھنڈر کیوں

پی.پی سری واستو رند

بے_تعلق روح کا جب جسم سے رشتہ ہوا

پی.پی سری واستو رند

پیش_منظر جو تماشے تھے پس_منظر بھی تھے

پی.پی سری واستو رند

فضا میں کرب کا احساس گھولتی ہوئی رات

پی.پی سری واستو رند

فکر کم بیان کم

پی.پی سری واستو رند

مانا کہ زلزلہ تھا یہاں کم بہت ہی کم

پی.پی سری واستو رند

ممتا_بھری نگاہ نے روکا تو ڈر لگا

پی.پی سری واستو رند

نشاط_درد کے موسم میں گر نمی کم ہے

پی.پی سری واستو رند

ہم دشت_بے_کراں کی اذاں ہو گئے تو کیا

پی.پی سری واستو رند

Recitation

aah ko chahiye ek umr asar hote tak SHAMSUR RAHMAN FARUQI