غزل 19

اشعار 4

پتھر نہ بنا دے مجھے موسم کی یہ سختی

مر جائیں مرے خواب نہ تعبیر کے ڈر سے

خواب دیکھے تھے ٹوٹ کر میں نے

ٹوٹ کر خواب دیکھتے ہیں مجھے

میں شر کی شرارت سے تو ہشیار ہوں لیکن

اللہ بچائے تو بچوں خیر کے شر سے

یہ دل عجیب ہے اکثر کمال کرتا ہے

جواب جن کا نہیں وہ سوال کرتا ہے

  • شیئر کیجیے

کتاب 1

دل کی ہوک

 

 

 

تصویری شاعری 1

یہ دل عجیب ہے اکثر کمال کرتا ہے جواب جن کا نہیں وہ سوال کرتا ہے

 

"ٹیکساس" کے مزید شعرا

  • تسنیم عابدی تسنیم عابدی
  • عشرت آفریں عشرت آفریں
  • سرور عالم راز سرور عالم راز
  • سید صبا واسطی سید صبا واسطی