غزل 17

اشعار 24

میں چپ رہا تو آنکھ سے آنسو ابل پڑے

جب بولنے لگا مری آواز پھٹ گئی

یہ محبت ہے اسے دیکھ تماشا نہ بنا

مجھ سے ملنا ہے تو مل حد ادب سے آگے

اے گردش ایام ہمیں رنج بہت ہے

کچھ خواب تھے ایسے کہ بکھرنے کے نہیں تھے