Zeb Ghauri's Photo'

زیب غوری

1928 - 1985 | کانپور, ہندوستان

ہندوستان کے ممتاز ترین جدید شاعروں میں نمایاں

ہندوستان کے ممتاز ترین جدید شاعروں میں نمایاں

غزل

بجھ کر بھی شعلہ دام_ہوا میں اسیر ہے

نعمان شوق

بجھ کر بھی شعلہ دام_ہوا میں اسیر ہے

نعمان شوق

بس ایک پردۂ_اغماض تھا کفن اس کا

نعمان شوق

بس ایک پردۂ_اغماض تھا کفن اس کا

نعمان شوق

بھڑکتی آگ ہے شعلوں میں ہاتھ ڈالے کون

نعمان شوق

بھڑکتی آگ ہے شعلوں میں ہاتھ ڈالے کون

نعمان شوق

بے_حسی پر مری وہ خوش تھا کہ پتھر ہی تو ہے

نعمان شوق

بے_حسی پر مری وہ خوش تھا کہ پتھر ہی تو ہے

نعمان شوق

خاک آئینہ دکھاتی ہے کہ پہچان میں آ

نعمان شوق

خاک آئینہ دکھاتی ہے کہ پہچان میں آ

نعمان شوق

خنجر چمکا رات کا سینہ چاک ہوا

نعمان شوق

خنجر چمکا رات کا سینہ چاک ہوا

نعمان شوق

سورج نے اک نظر مرے زخموں پہ ڈال کے

نعمان شوق

سورج نے اک نظر مرے زخموں پہ ڈال کے

نعمان شوق

شعلۂ_موج_طلب خون_جگر سے نکلا

نعمان شوق

شعلۂ_موج_طلب خون_جگر سے نکلا

نعمان شوق

عکس_فلک پر آئینہ ہے روشن آب ذخیروں کا

نعمان شوق

عکس_فلک پر آئینہ ہے روشن آب ذخیروں کا

نعمان شوق

گرم لہو کا سونا بھی ہے سرسوں کی اجیالی میں

نعمان شوق

گرم لہو کا سونا بھی ہے سرسوں کی اجیالی میں

نعمان شوق

گہری رات ہے اور طوفان کا شور بہت

زیب غوری

گہری رات ہے اور طوفان کا شور بہت

زیب غوری

لگاؤں ہاتھ تجھے یہ خیال_خام ہے کیا

نعمان شوق

لگاؤں ہاتھ تجھے یہ خیال_خام ہے کیا

نعمان شوق

مراد_شکوہ نہیں لطف_گفتگو کے سوا

نعمان شوق

مراد_شکوہ نہیں لطف_گفتگو کے سوا

نعمان شوق

میں تشنہ تھا مجھے سر_چشمۂ_سراب دیا

نعمان شوق

میں تشنہ تھا مجھے سر_چشمۂ_سراب دیا

نعمان شوق

میں تشنہ تھا مجھے سر_چشمۂ_سراب دیا

نعمان شوق

میں عکس_آرزو تھا ہوا لے گئی مجھے

نعمان شوق

میں عکس_آرزو تھا ہوا لے گئی مجھے

نعمان شوق

ٹھہرا وہی نایاب کہ دامن میں نہیں تھا

نعمان شوق

ٹھہرا وہی نایاب کہ دامن میں نہیں تھا

نعمان شوق

ڈھلا نہ سنگ کے پیکر میں یار کس کا تھا

نعمان شوق

ڈھلا نہ سنگ کے پیکر میں یار کس کا تھا

نعمان شوق

کب تلک یہ شعلۂ_بے_رنگ منظر دیکھیے

نعمان شوق

کب تلک یہ شعلۂ_بے_رنگ منظر دیکھیے

نعمان شوق

کوئی بھی در نہ ملا نارسی کے مرقد میں

نعمان شوق

کوئی بھی در نہ ملا نارسی کے مرقد میں

نعمان شوق

کھلی تھی آنکھ سمندر کی موج_خواب تھا وہ

نعمان شوق

کھلی تھی آنکھ سمندر کی موج_خواب تھا وہ

نعمان شوق

ہے بہت طاق وہ بیداد میں ڈر ہے یہ بھی

نعمان شوق

ہے بہت طاق وہ بیداد میں ڈر ہے یہ بھی

نعمان شوق

Recitation

aah ko chahiye ek umr asar hote tak SHAMSUR RAHMAN FARUQI