غزل 2

 

اشعار 3

تم بھی اس شہر میں بن جاؤ گے پتھر جیسے

ہنسنے والا یہاں کوئی ہے نہ رونے والا

  • شیئر کیجیے

جانے کیا سوچ کے ہم تجھ سے وفا کرتے ہیں

قرض ہے پچھلے جنم کا سو ادا کرتے ہیں

رشتۂ درد کی میراث ملی ہے ہم کو

ہم ترے نام پہ جینے کی خطا کرتے ہیں

 

کتاب 2

لمحہ لمحہ پیاس

 

1991

لمس ھوا

 

1928

 

"مراد آباد" کے مزید مصنفین

  • احتشام بچھرایونی احتشام بچھرایونی